Ticker

6/recent/ticker-posts

سندھہ کے مشہوراداکار مرحوم گلاب چانڈیو کی بایو گرافی

 

actor-gulab-chandio-biography

غلام محمد گلاب المعروف گلاب چانڈیو 6 جنوری 1958 کو ضلع نواب شاہ کے گاؤں شہمیر چانڈیو میں کسان کے گھر میں پیدا ہوئے ۔

انہوں نے میٹرک اور انٹرمیڈیٹ کی تعلیم اپنے آبائی گاؤں سے حاصل کی ۔ 1976 میں ، وہ کراچی جا کر انہوں نے محکمہ فوڈ میں کلرک کی ملازمت حاصل کی ۔ ذوالفقار علی بھٹو کی سزائے موت کے بعد وہ بعد احتجاج میں شریک ہونے پر جیل چلے گئے تھے اور اس کے بعد 1978 کے دوران نواب شاہ واپس آگئے تھے ۔

گلاب چانڈیو نے 1980 کی دہائی کے آغاز میں ٹیلی ویژن اداکار کی حیثیت سے اپنے کیریئر کا آغاز سندھی ڈراموں سے کیا ۔ اس کے بعد سندھی زبان کے ایک اداکار کی حیثیت سے پی ٹی وی پر ایک خاص پہچان ملی اور جلد ہی انہوں نے اپنی صلاحیتوں کو ثابت کردیا اور اردو ڈراموں میں بھی بڑے بڑے کردار حاصل کرنا شروع کردیئے ۔ سنہ 1998 کا پہلا ڈرامہ 1980 میں خان صاحب تھا ۔ وہ مختلف ڈراموں اور ٹی وی سیریز میں نظر آیا۔ زینت ، روش ، نوری جام تماچی ، ٹیپو سلطان اور تلاش ان کے مشہور ڈرامے ہیں ۔

گلاب چانڈیو کو اپنی گفتگو مکالمہ کی انداز اور وسیع پیمانے پر کام کے لئے پہچانا گیا ۔ اس کے باوجود مخصوص کردار اس کے شہرت کا دعویدار ہیں ۔ انہوں نے تھیٹر ڈراموں اور فلموں میں بھی کام کیا ہے ۔ ان کی پہلی فلم "دشمن" تھی ۔ ان کی ایک اور سندھی فلم "محب شیدی" 1990 میں ریلیز ہوئی جس میں انہوں نے مرکزی کردار ادا کیا ۔ وہ 1995 میں سید نور کی فلم ”سرگم“ میں بھی نظر آئے ۔ مجموعی طور پر گلاب چانڈیو نے 300 سے زیادہ اردو اور سندھی ڈراموں اور 6 پاکستانی فلموں میں حصہ لیا ۔ انہوں نے کئی سندھی سیریل میں بھی ہیرو کا کردار ادا کیا ۔

گلاب چانڈیو نے سیاسی سرگرمیوں میں بھی حصہ لیا اور نواب شاہ اور کراچی سے دو بار عام انتخابات لڑے، لیکن وہ دونوں میں ہار گئے۔ 2016 میں ، وہ پاکستان تحریک انصاف میں شامل ہوئے تھے ۔

سنہ 2016 میں ، گلاب چانڈیو کو آرٹ اور ڈرامہ میں خدمات کے لئے صدر پاکستان کی  "پرائیڈ آف پرفارمنس" سے نوازا گیا تھا۔

گلاب چانڈیو طویل عرصے سے ذیابیطس اور دل کی بیماری میں مبتلا تھے ۔ ان کا 18 جنوری 2019 کو گلشنِ اقبال ، کراچی میں انتقال ہوا ۔


Post a Comment

0 Comments